• When Every Man lives without "LAW" Every Man lives without "FREEDOM"
  • javedqazi@javedqazilawfirm.com
  • Office Hours: 08.00am - 10.00pm
  • 0300-8220365 , 0313-1234169 , 0333-1950248
  • 10/2, Khayaban-e- Ameer Khusro, Phase – VI, D.H.A, Karachi.
let us stand up against the rising crimes against women


LET US STAND UP AGAINST THE RISING CRIMES AGAINST WOMEN

Murder of Noor Muqaddam and every day we hear sexual harassment incidences, which have increased geometrically in recent days, has raised serious questions upon our narrative, which we have, more specifically, built from the times of Gen. Zia till date.

let us stand up against the rising crimes against women

 

This narrative was intentionally developed to shrink the space for democratic forces, values, norms in the society. The society that must have made its deep roots into its inherent and long old embedded values being plural and inclusive, if it had not met to repeated shocks of derailing the democratic order, if 11th August Speech of founder of the Nation has had been made preamble of our Constitution.

Ironically, soon after his death, the speech was wiped out from our history as if it hasn’t been made. Distortion that was made through Objective Resolution, which act the historians believe was made to defer the mandatorily required framing and promulgation of the Constitution.

The right-wing populism universally has usurped power through such methods. The strong institutional base comes to play its role in developing a counter narrative against such perversions. Ironically in Pakistan this base has not yet made its place, it is not still settled that will there be civil rule or military rule for that matter hybrid system? More the artificial means to control power are taken, more the space of independent media, rule of law, and the narrative that has been evolved through the historical discourse under the Sufi movement is squeezed.

When the prime minister has refuged inthis narrative, a man who is enlightened by his all academic back ground, yet he knows well the sustenance of his power is lying on this anti women narrative. It has now gained a huge thick layer, its reversion is challenging at the time when at our North, resurgence of Taliban has gained momentum. Which has given strength to those school of thoughts that are ultra conservative and hold the identical stand on infringing the rights of women as enshrined in our Constitution.

Noor Muqadam’s murder is not the primary point here, but the way she was murdered by beheading her made every one of sane mind was shocked, she was murdered like as ISIS states were doing for that matter when there was rule of Mullah Omar on Afghanistan. Her murder was not an execution through a decree by any court or state. It was a murder being made by a private person. The question directly goes in its origin, the way the murderer Zahir Jaffar was brought up, on the face and through his activities it was appearing that he used to go to dance parties either. Yet his narrative was same against women, an average Pakistan man holds.

Today the hegemonic forces in society are severally reacting upon a slogan which was raised by the women activists on this year’s, international women day: “my body, my will”.

By an average mindset across the board and predominantly in men, this slogan was interpreted as if these activists were demanding free sex rights. Noor Muqadam case has raised serious question on this interpretation, and has vindicated that they were wanting free will and choice. The women activists basically are wanting that it is their right to live in accordance to their choices and rights equal to that of man. Noor Muqadam had been brutally murdered by her boyfriend because she had invoked her right to go a separate way.

let us stand up against the rising crimes against women

Our Sufi movement and its character of Marvi is an icon of the value of free will and choice a right of woman. Needless to mention here the tale of Marvi is that Marvi was kidnapped by the King “Omar”. While on his way she saw this beautiful gypsy girl Marvi, he ordered his soldiers to abduct her. The King wanted to marry her but with her will, she was asked under her being captive of him in his castle. She repeatedly dismissed the petition of the King. After unsuccessful attempts of the King to get her consent, he freed Marvi and got her back to Malir where her parents and clan was living.

If a woman is raped. We believe that there must be contribution of women in its rape. We hold that such woman may be of bad character. Killing of woman is largely understood that is is an easy work, one could escape from the laws of land. Onus is on woman to prove if she is raped. The immoral act if a woman does, she is punished directly and indirectly far more than man. If man falls in love it is ok. But if woman does same act, it is an act of disrespect for the family. And those families which are gender sensitized, from the canons of average Pakistani mindset they are liberals and such liberalism to them is abuse.

The whole historic background and definition of libralism has been corrupted much the same way as the word ‘secular’ has been defined as it means atheism. This is being made not by any ordinary person, but the father of Urdu language Moulvi Abudul Haq, in his organized dictionary of Urdu, word secular means atheism.

We had Jinnah whose wife passed away long way before we won independence, he kept his Sister Fatima to stand with him in his every public appearance. We had Bhutto, his wife Nusrat wearing our classical South Asian dress ( Sarri), was always with him in his every visit as PM. And now our PM goes on visits without his wife. His wife accompanies him to Umrah only. Which is great U-turn of Khan once he was husband of Jamaima.

Such images show woman as feeble object, her every contract as social being, be that in the family or in society stands weak.

It has been good to see that when PM had given his famous line in an interview to a foreign channel that “men are not robots’, Maryam Nawaz gave him a rebuttal. But there was no rebuttal from her when he said Osama bin Laden is Shaheed. It was Bilawal Bhutto he replied unequivocally to the PM in that case.

This narrative has been so corrupted merely because to usurp power and thus make alliance with the highly conservative mindset. It will even go deep down into the society, where its growth is severally hampered. Our GDP, per capita income and other economic indicators, even the women development indicator has seriously suffered. It is a great luxury to carry on this way and maintain the status qua of artificially running the state affairs through military dictatorships for that matter through hybrid system.



Takkay Da Tamasha

Horse trading won’t go till the military stops its intervention in politics. More important question here is not of Art 226, it is rather of Art 238 and 239. A right of making amendment in Art 226.
It is all like a two Penney opera to make insult of legislatures, of Parliament and constitution.

https://www.express.pk/story/2143047/268/?fbclid=IwAR0SQeqRWsNR0A1eUua2JXKOk8GyCMtasx-7wf4kK0Jiw6H2rPA1RrbxdW8



Chonteeswan Darwaza

تُک بندیاں، سرحدیں ، حدیں اور نہ جانے کتنی لکیریں ہیں ۔ ہاتھوں کی لکیروں سے لے کر دماغ میں رہتے خیالوں تک۔سب جیسے گماں ممکن ہو اور گماں کہیں نہیں، تو پھر ممکن کیسے!
ہمارے ایک نسیم کھرل صاحب تھے ،سندھی زبان کے کہانی کار ، چھوٹے چھوٹے افسانے لکھتے تھے بہت گہرائی اور باریکیوں میں جاکر ، سماج کے کرداروں کی عکاسی کرتے تھے ۔ یوں کہیے کہ اپنے الفاظ سے ان باریکیوں کی تصویر اس طرح کھینچتے تھے کہ وہ دماغ میں منظر بن کر حقیقت نظر آتی تھیں۔ بالکل اس عظیم بنگالی فلم سازـ ـ رابندرہ دھرم راج کی طرح جس نے کچی بستیوں پر بنی فلم ’’چکرا‘‘ بنائی تھی۔

https://www.express.pk/story/2069963/268/?fbclid=IwAR3hkxNPwzJ1haZdyPXjMkxHDEUqM3cKZCuXczC8az0K2turalfVaHyM5Ck&__cf_chl_jschl_tk__=e9cadd96ab6751478e7676398dc7d600c387c956-1598686945-0-AbGRFsUbPpvv19kFovECjuJMV7hllhQVZ7eZR0T5CKu1ENFHV-5a2DsDL6raoFcaLxxplV9aiAHYinSQZgM4ggmOjIUUgICrDy4Hvw8KCcepzI2v4IZcnjYQLLeJCH6A45SjiJpCDSrG9n9CvezhIDmYEeMPSc968FWVe4_4ZIZp5VdmGrHXvVKi2EWdaWltmduKgjWsjdyqcx7YHY-LjGyDcbaqDE4ZF3otJ3ZSdty1VlBuCP5cD6mFDeP7cZzwFobMWk1EHcC53Z1xcIHDgiL6f_DcCqBzEQj-LBofwyj09BK-lULpcQDc4l5tbjoW7ArMgKAi5a57qc54anWPnYrwypxzVs_EnViVhiGCkV94_jZAG6yDEnIo-c01rkPjvpkmOurUA3EtqHrvch3GqHk



Kashmir

ضیا الحق کی پالیسی نے نہ صرف پاکستان میں انتہا پسندی کو جنم دیا بلکہ ہندوستان میں بی جے پی کو بھی مضبوط کیا۔ اسوقت ہمیں مسجدِآیا صوفیہ کی آزادی تو نظر آ رہی ہے مگر یہ نہیں نظر آ رہا کہ اسرائیل اس پاداش میں فلسطین اور بیت المقدس کو کیا نقصان پہنچائے گا۔

https://www.express.pk/story/2067192/268/?fbclid=IwAR0TFZIdc5zk1YKyGoWXqDvU17_1kUswkxE7gYBLsU0roHyg9OAuxtuBWog



AJRAK

Ajrak is fighting itself against the terrorist like Ahsanullah Ahsan. my article today…………

https://www.express.com.pk/epaper/PoPupwindow.aspx?newsID=1107615753&Issue=NP_KHI&Date=20200726&fbclid=IwAR3oY6PtP5CoGIO26NYnzBW4cr8qEsuFtQUj0Zy-0DqtJydo42k3lHIDs0U



Corona Kay Zamanon Main

عید قرباں کی آمد آمد ہے۔ بے شک قربانی کے اس فریضے سے بڑا کون سا فریضہ ہو گا، مگر عین اس وقت جب کورونا بھی ساتھ ساتھ موجود ہو تو بڑا مشکل ہو گا یہ فریضہ نبھانا، جب یہ مانی ہوئی حقیقت ہے کہ کورونا وائرس جانوروں میں زیادہ پایا جاتا ہے۔

https://web.facebook.com/javed.qazi.9/posts/3775152432499527



Aakhir Kab Tak

آپ نے اسامہ بن لادن کو شہید فرمادیا اور بے نظیر بھٹو کو شہید نہیں مانا ، کم از کم سندھ میں اس بات پر بہت غم و غصہ پایا جاتا ہے۔ اگر یہ باب جو اگر یہاں سارے کھول دیے تو فہرست بہت طویل ہوجائے گی۔ مختصر یہ کہ جس طرح گورنر غلام محمد کو لگے فالج نے ان کی اقتدار پر مضبوط حیثیت کمزور کردی تھی، اسی طرح اگر خان صاحب کی گرفت بھی اقتدار پر کمزور ہوچکی ہے ان کے وزراء کے غیر سنجیدہ بیانوں کی وجہ سے اور پھر فواد چوہدری کا انٹرویو جلتی پر تیل کا کام۔

https://www.express.pk/story/2056587/268/?fbclid=IwAR3gu7gTs041Ki3qpjp08dclX5_QxaLqa02OfFXFr-nR0LCFYI3rMnJc-lY



Badla Badla sa Mausam

بجٹ آگیا اور اب ہمارا حملہ صوبوں کے پیسوں پر ہے ہم نے ان کی این ایف سی ایوارڈ میں کٹوتی کردی۔ یہ جانتے ہوئے بھی کہ یہ وہ صوبے ہیں جن کے دائرہ کار میں صحت کا شعبہ آتا ہے اور اس شعبے کے لیے اس وقت زیادہ بجٹ درکار ہے ۔ وہ پاور جو لوگوں کی فلاح و بہبود کے لیے ہیں وہ اسی فیصد صوبوں کے پاس ہیں اور صوبوں کے اسی فیصد اخراجات سوشل اخراجات ہیں جب کہ وفاق کے اخراجات قرضوں کی ادائیگی اور دفاع کے لیے ہیں۔

https://www.express.pk/story/2052533/268/



Aaeen, Geo Aur Geenay Dou

We are getting far from the Constitution. Its fall outs shall be deep and devastating. Are we ready to face this and survive? We are totally on borrowings. We can’t come out of it unless we seriously realize that it is not possible to go the way we have been.

https://www.express.pk/story/2050599/268/?fbclid=IwAR39tEjDMhHZAhEKeFipb-9iXWalq3J2QhLNtev42_5MProHEjQbP1Wc80c



Shab-e-Khoon

History of coups, reasons, forms and shapes, and now how it is happening against Khan.

 

کئی شب خون مارے گئے، ہم نے دیکھے بھی، مگر ہمیں سمجھ نہیں آئے۔ شب خون کی کئی اشکال ہیں۔ شب خون ناشاد بھی ہوتے ہیں اور ناکام بھی۔ قدیم رومن مپائر میں اس کی بنیاد پڑی۔ یزر نے سینیٹ کے حکم کو ٹھکرا دیا اور اقتدار سنبھال لیا مگر اس کی جڑیں سلطنت روم میں تھیں، سینیٹ لوگوں میں غیر مقبول ہو چکی تھی، اپنی افادیت کھو چکی تھی اور جب جب حق حکمرانی اور آئین اپنی افادیت کھو بیٹھتا ہے یہ وہ لمحہ ہوتا ہے جب شب خون اپنی راہیں بناتا ہے۔ اسی لیے تو بارہا شب خون ایسے بھی مارے گئے۔ شب خون کے بعد پھر سے نیا دربار سجتا ہے ۔ سب کے سب اپنے قبلے درست کر لیتے ہیں یہاں تک نظریۂ ضرورت بھی تحرک میں آ جاتا ہے ۔

بہت سی اقسام ہیں شب خون کی۔ اورنگزیب بادشاہ نے اپنے بڑے بھائی اور اپنے باپ کو قید کیا، اقتدار پر قبضہ کیا وہ بھی شب خون تھا بس شب خون کو صحیح ثابت کرنے کے لیے کسی نہ کسی نظریے کی ضرورت ہوتی ہے، پھر وہ شب خون چاہے جنرل ضیاء الحق کا ہو یا اورنگزیب بادشاہ کا۔ آئین ساز پارلیمینٹ اور آئینی بادشاہ کے خلاف جو پہلا شب خون تاریخ میں نظر آتا ہے وہ برطانیہ میں جنرل کرام ویل کا تھا جو ایک مذہبی آدمی تھا۔

عجیب پارلیمینٹ تھی وہ جو اپنی مدت خود ہی بڑھاتی گئی جس طرح 1950’s کی دہائی میں ہماری پارلیمینٹ تھی نہ الیکشن کروانے کے لیے اور نہ ہی آئین دینے کے لیے تیار تھی۔ جنرل کرام ویل کے لیے یہ بڑا نادر موقعہ تھا، اس نے پارلیمینٹ کے اندر گھوڑے دوڑا دیے، بادشاہ کو  سزائے موت دی بلکہ کئی لوگ مروا دیے، خون خرابہ کیا۔ مگر اس کی بد بختی کہ 1658ء میں یعنی نو سال بعد ہی سخت بیمار ہوا اور انتقال کرگیا، بادشاہت اور پارلیمینٹ واپس بحال ہوئیں اور جنرل کرام ویل کی لاش کو عبرت کے طور پر لندن میں قبر سے نکال کر سرعام لٹکایا گیا کہ شب خون کے اس خیال کا خاتمہ کیا جا سکے۔

جب فرانس کا بادشاہ کمزور ہوا، 1789ء کے فرینچ انقلاب نے اس کے اقتدار کا خاتمہ کیا، فرانس ریپبلکن ریاست بنا، پارلیمینٹ بنی مگر کمزور۔ اور اس طرح فوج کے کمانڈر نیپولین نے شب خون مارا اور جنرل کرام ویل کی طرح بادشاہ بن گیا۔ اور پھر بیس سال بعد بالآخر اقتدار کا خاتمہ ہوا۔

ہٹلر جرمنی میں آیا تو جمہوریت کی سیڑھیاں چڑھ کر آیا تھا مگر وہ شب خون در شب خون مارتا گیا، پارلیمینٹ کے ذریعے اپنے آپ کو تاحیات صدر بنا کر پارلیمینٹ کو تحلیل کر دیا۔ پوری دنیا کو فتح کرنے کے چکر میں جب روس پہنچا تو نیپولین کی طرح اس کو بھی شدید شکستگی کا سامنا کرنا پڑا۔ ہٹلر نے اپنے اقتدار کے فقط پندرہ برس ہی گزارے۔

لینن کا انقلاب بھی شب خون تھا۔ اور جس نظریہ کو وہ شب خون کے طور پر لے کر آیا تھا وہ ستر سال بعد بلآخر اختتام کو پہنچا۔ لاطینی امریکا سے لے کر افریقہ تک کئی شب خون مارے گئے۔ جمال ناصر نے مصر پر شب خون مارا۔ عراق پر شب خون مارا گیا، ایران پر شب خون مارا گیا، بادشاہ رخصت ہوا۔ جو شب خون جمہوریت اور آئین پر چلتی ریاستوں پر مارے گئے وہ زیادہ عرصے چل نہ سکے۔ وہ چاہے جنرل کرام ویل کا برطانیہ پر شب خون ہو یا پھر جنرل ایوب کا پاکستان پر۔ملک میں آئین تھا ہی نہیں، آئین بنانے والوں نے آئین بنایا ہی نہیں اور جو آئین اس وقت بنا وہ وفاق کو مانتا ہی نہیں تھا۔

ایک ہی قومی اسمبلی تھی، سینیٹ کا وجود نہ تھا۔ ایک سال یا ہر ماہ بعد وزیر اعظم تبدیل ہوتا تھا۔ کمزور سول قیادت نے بلآخر فوجی سربراہ کا سہارا لیا۔ جنرل ایوب وزیر دفاع بنا۔ چالاکی سے اسکندر مرزا سے پارلیمینٹ کو تحلیل کرنے کا کہا گیا اور پھر کچھ ہی دنوں میں اسکندر مرزا کو جہاز میں بٹھا دیا گیا، آئین کو معطل کر کے جنرل ایوب خود مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر بن گئے اور یوں مارشل لا فاتح اور قوم مفتوح۔ اس قوم پر نافذ کر دیا گیا۔ اس وقت دارالحکومت ڈھاکا نہیں بلکہ کراچی تھا۔

اگر ڈھاکا ہوتا تو شاید شب خون کی تاریخ مختلف ہوتی۔ خیر کراچی نے بھی آمریت مسلط کرنے والوں کو تنگ کیا، وہ فاطمہ جناح کو اپنا لیڈر مانتے تھے۔ پھر ایسا ہوا کہ دارالحکومت کراچی سے بھی رخصت ہوا۔  1960ء میں جنرل ایوب نے ملک کو آئین بھی دیا۔ پارلیمنٹ بھی دی اور صدارتی نظام بھی بنایا۔ جنرل ایوب کا پہلا الیکشن براہ راست نہ تھا مگر دوسرا الیکشن براہ راست کروانے کے سوا ان کے پاس کوئی چارہ نہ تھا۔ محترمہ فاطمہ جناح سامنے آ گئیں۔ شیخ مجیب سے لے کر باقی تمام سیاستدان فاطمہ جناح کے پیچھے تھے اور بھٹو صاحب جنرل ایوب کے۔

پھر جنرل ایوب کے اقتدار پر شب خون مارا گیا۔ پہلا الیکشن وہ زبردستی جیت بھی گئے مگر خود ان کے جرنیلوں نے ان کو رخصت کیا۔ یہ سارا مسئلہ مشرقی پاکستان تھا، انتخابات ہوئے، کیا خبر تھی بنگال میں طوفان آئے گا اور مغربی پاکستان میں رہتے اقتدار نے ان کی نہ مدد کی نہ ہی مدد کو پہنچ سکے، شیخ مجیب نے اس بات پر واویلا مچایا، مشرقی پاکستان کے پاس جمہوریت اور آئین کے علاوہ رستہ نہ تھا۔ جب وہ جیتے تو ان کو اقتدار نہ ملا بلآخر پاکستان پر شب خون کے سائے نے ملک کو دو لخت کر دیا۔

خود بھٹو بھی شیخ مجیب کے خلاف شب خون میں شریک تھے اور پھر سات سال بعد خود ان کے خلاف شب خون مارا گیا۔ وہ پھانسی چڑھ گئے۔ شیخ مجیب کے خلاف بھی شب خون مارا گیا، وہ مارے گئے۔ اندرا گاندھی نے ایمرجنسی لگا کر شب خون کی طرز پر آگے بڑھنا چاہا مگر چونکہ ہندوستان ایک بھرپور آئینی ریاست تھی لہٰذا سپریم کورٹ نے اندرا گاندھی کے آمر بننے میں رکاوٹیں کھڑی کر دیں۔

یہ زمانہ سرد جنگ کا زمانہ تھا۔ ہر شب خون کے پیچھے یا تو سویت یونین ہوتا تھا یا پھر امریکا کی سیاست۔ شب خون جو جنرل مشرف نے مارا وہ نواز شریف کے غیر مقبول طرز حکمرانی کی کوکھ سے پیدا ہوا۔ جنرل ضیاء الحق کے بعد جو بھی جمہوریت آئی ان پر 58(2)(B) کی تلوار لٹکتی رہی جو خود ایک شب خون کی شکل تھی۔یہ دس سال بہت الجھے ہوئے گزرے۔ دو وزیر اعظم اگر گئے تو سپریم کورٹ کے آرڈر سے گئے مگر ان کی حکومت نہ گئی۔ پھر ہمارے ورلڈ کپ جیتنے والے کپتان دو بڑی پارٹیوں کو شکست دے کر وزیر اعظم بنے۔

ہمارے وزراء اعظم نہ جانے کیوں یہ سمجھتے رہے کہ ان کو عوام نے نہیں کسی اور نے جتوایا ہے۔ پھر آہستہ آہستہ اور بھی کم کم وزیر اعظم ہوتے گئے اور بہت مدھم، بہت ہلکی موسیقی کے ساتھ،  اقتدار یوں لگتا ہے ان کے ہاتھوں سے شفٹ ہوتا چلا گیا ہے، اور جہاں گیا ہے وہیں شب خون ہے۔




Are You Having Any Problems But Can’t Consult To Anyone?

Talk to us! We promise we can help you! Call Now! 0300 8220365